سجنے دت کے سر پر ایک بار پھر جیل جانے کی تلوار لٹکنے لگی

14

بالی ووڈ میں سنجو بابا کے نام سے مشہور اداکار سنجے دت کے سر پر ایک بار پھر جیل کی تلوار لٹکنے لگی۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق سنجے دت کی جیل سے قبل از وقت رہائی کے معاملے پر مہاراشٹرا حکومت نے ممبئی ہائی کورٹ میں جواب داخل کرادیا ہے جس میں کہا گیا کہ حکومت نے سنجے دت کے معاملے پر قانون کی خلاف ورزی نہیں کی اور نہ ہی انہیں وی آئی پی اسٹیٹس کی وجہ سے جلدی رہا کیا گیا البتہ عدالت اگر ہماری بات سے متفق نہیں تو اداکار کو دوبارہ جیل بھیج دیا جائے۔

جسٹس آر ایم ساونت کی سربراہی میں بننے والے بینج نے اس موقع پر کہا کہ عدالت کے اس قسم کا کوئی ارادہ نہیں ہے وہ تو بس اس بات کی تصدیق کرنا چاہتی تھی کہ آیا، سنجے دت کے رہائی کے معاملے میں قانون کی کوئی خلاف ورزی تو نہیں کی گئی۔

دالت نے سزا کے دوران سنجے دت کو متعدد بار پے رول پر رہائی دینے کا معاملہ بھی اٹھایا جس پر حکومتی وکیل نے موقف اپنایا کہ حکومت اور جیل حکام معمول کے مطابق تمام قیدیوں کو ان کے اچھے رویے کی وجہ سے پے رول پر رہائی دیتی ہے۔ بعد ازاں عدالت نے سنجے دت کو بار بار پے رول پر رہائی دینے پر حکومت کو 2 ہفتوں کے اندر تفصیلی حلف نامہ جمع کرانے کا حکم دیا۔

اس سے قبل سنجے دت کو قبل از وقت رہائی دینے کے خلاف ممبئی ہائی کورٹ میں ایک درخواست دائر کی گئی تھی جس پر عدالت نے مہاراشٹرا حکومت سے اس معاملے پر جواب طلب کیا تھا۔

واضح رہے سنجے دت کو 1993 کے ممبئی بم دھماکوں میں ملوث ملزمان کا اسلحہ گھر میں چھپانے کے جرم میں عدالت نے 6 سال کی سزا سنائی تھی جو بعد ازاں کم کر کے 5 سال کر دی گئی تھی تاہم اداکارہ کے اچھے رویے کی وجہ سے ان کی سزا میں 8 ماہ کی کمی کرکے فروری 2016 میں رہا کردیا گیا تھا۔