عوام موجودہ نظام کیخلاف اٹھ کھڑے ہوں: نواز شریف

4

سابق وزیر اعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ جب میں نے کرپشن کی ہی نہیں تو کیوں نکالا گیا؟ جس کی لاٹھی اس کی بھینس، اب ایسا نہیں ہوگا۔ پورے پاکستان کی یہی آواز ہے، کوئی سن سکتا ہے تو سن لے۔

گجرات:  سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کا گجرات میں عوام کے جمِ غفیر سے پرجوش خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پہلے صدر، پھر مشرف اور اب ججز نے فارغ کر دیا،عوام کے ووٹ کی کوئی وقعت نہیں، یہ مذاق برداشت نہیں کر سکتا۔ کیا چپ کر کے گھر بیٹھ جاؤں؟ یا ظلم کا مقابلہ کرنا چاہیے؟ کیا آپ نے عدالت کا فیصلہ قبول کیا؟ سابق وزیر اعظم نے کہا کہ میری اپیل عوام کی عدالت ہے، میرے ساتھ جو ہو رہا ہے اسے اللہ تعالیٰ دیکھ رہا ہے۔ میاں نواز شریف کا کہنا تھا کہ مجھے اپنے بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر نکال دیا گیا اور آپ کے ووٹ کی پرچی پھاڑ کر آپ کے ہاتھ میں تھما دی گئی۔ کروڑوں لوگوں نے منتخب کیا لیکن صرف پانچ ججوں نے نکال دیا۔ 70 سالوں سے ملک کے ساتھ ایسا ہی مذاق کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ مجھے کیوں نکالا گیا؟ ایسی کون سی غلطی کی ہے؟ کیا میں نے کوئی کرپشن کی؟ میں نے تو قومی خزانے کو امانت سمجھا۔ سابق وزیر اعظم ریلی میں موجود شرکا سے پوچھا کہ مجھے بتاؤ اب کیا کروں؟ چپ کر کے گھر بیٹھ جاؤں یا ڈٹ کر اس کا مقابلہ کروں؟ جس کی لاٹھی اس کی بھینس کا نظام اب نہیں چل سکتا۔ حاکمیت کا حق عوام کا ہے اور عوام سے یہ حق کوئی نہیں چھین سکتا۔ یہ 20 کروڑ عوام کی عزت کا معاملہ ہے، میں عوام کی عزت کو نہیں روندنے دوں گا۔ ملک کو بدلنا ہوگا، اس قوم کو بدلنا ہو گا۔ عوام موجودہ نظام کیخلاف اٹھ کھڑے ہوں۔