میاں صاحب ہر تقریر میں توہین عدالت کر رہے ہیں، بلاول

22

میاں صاحب حکومت میں رہ کر اپوزیشن کرنا چاہتے ہیں، نواز شریف، بھٹو اور بے نظیر کی مظلومیت کے پیچھے چھپنا چاہتے ہیں، اس وقت جمہوریت کو کوئی خطرہ نہیں، صرف نواز شریف کی ذات کو خطرہ ہے، بلاول بھٹو کی دھواں دار پریس کانفرنس۔

اسلام آباد:  چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمارا موقف ایک ہی ہے، کائرہ زور سے اور خورشید شاہ نرم بات کر رہے ہیں، آرٹیکل 62، 63 پر رضا ربانی کا مؤقف ان کا ذاتی ہے۔ بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی ن لیگ کے ساتھ نہیں جمہوریت کے ساتھ ہے، اس وقت جمہوریت کو کوئی خطرہ نہیں، صرف نواز شریف کی ذات کو خطرہ ہے، نواز شریف کا جمہوریت سے کوئی تعلق نہیں۔ بلاول کا یہ بھی کہنا تھا کہ میاں صاحب حکومت میں میثاق جمہوریت بھول جاتے ہیں، جب ہٹایا جاتا ہے تو میاں صاحب کو سب کچھ یاد آ جاتا ہے، مجھے تو یہ سب ڈرامہ لگ رہا ہے۔ بلاول نے مزید کہا کہ پنامہ پیپرز میں اسٹیبلشمنٹ کا کیا قصور ہے، پنامہ پیپرز تو باہر سے آئے ہیں، نواز شریف، بھٹو اور بے نظیر کی مظلومیت کے پیچھے چھپنا چاہتے ہیں، نواز شریف مجھ سے بات کرنا چاہیں تو بات نہیں کروں گا، نواز شریف فون بھی کریں گے تو فون نہیں اٹھاؤں گا، نوازشریف نے معاہدے کرنا چاہا تو دستخط نہیں کروں گا۔