نوازشریف کے خلاف فیصلے سے ایک سال قبل آگاہ تھے، ایازصادق

6

اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق کا کہنا ہے کہ نوازشریف کے خلاف فیصلے کی ایک سال قبل ہی پیشگی اطلاع تھی تاہم ہم سپریم کورٹ کے فیصلے کو مانتے ضرور ہیں لیکن اتفاق نہیں کرتے۔

لاہور کے علاقے اچھرہ میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کا کہنا تھا کہ ہماری خواہش ہے کہ کوئی ایسا قدم نہ اٹھایا جائے جس سے ملک کا نقصان ہو لیکن یہاں ہر کوئی ڈیڑھ اینٹ کی مسجد بنانے میں مصروف عمل ہے، اداروں میں کچھ لوگوں کی وجہ سے مسائل پیدا ہوتے ہیں اور اگر ادارے اپنی حدود سے باہر نکلیں تو نقصان پاکستان کا ہوگا، ملکی استحکام کے لیے ضروری ہے کہ ادارے اپنی حدود میں رہ کر کام کریں۔

ایاز صادق کا کہنا تھا کہ پاناما کیس میں سپریم کورٹ کے فیصلے سے ایک سال قبل ہی آگاہ تھے، ہمیں امید تھی کہ فیصلہ نوازشریف کے خلاف ہی آئے گا تاہم ہم نے فیصلے کو من وعن قبول کیا لیکن اس فیصلے سے اتفاق نہیں کرتے، نیب نے بھی جے آئی ٹی رپورٹ پر ریفرنسز دائر کئے ہیں ابھی کیس چلے گا اور دیکھا جائے گا اور 12 ستمبرکو ہونے والی سماعت میں اچھے نتائج کی توقع ہے۔

اسپیکرقومی اسمبلی نے کہا کہ نوازشریف کی نااہلی کے بعد شریف خاندان کے لئے مشکل حالات پیدا ہوئے تاہم مریم نواز اور ان کی والدہ نے کٹھن حالات میں سیاسی سفر کا آغاز کیا، این اے 120 میں کامیابی کلثوم نوازکی منتظر ہے،  ہمیں نوازشریف کا ہرفیصلہ قبول ہے اور وہ جسے قائد بنائیں گے وہی ہمارا قائد ہوگا۔