ایشیائی بینک نے پاکستان کیلیے 80 کروڑ ڈالرمالی معاونت کی منظوری دیدی

12

ایشیائی ترقیاتی بینک (اے ڈی بی) نے تجارت اور رابطوں کے فروغ کے لیے پاکستان کو 80 کروڑ ڈالر مالی معاونت کی منظوری دے دی ہے۔

گزشتہ روز جاری بیان کے مطابق بینک کے بورڈ آف ڈائریکٹرز نے علاقائی رابطوں اور وسط ایشیا علاقائی اقتصادی تعاون (کاریک) میں تجارت کے فروغ کے ضمن میں پاکستان کے لیے کئی قسطوں پر مشتمل مالی معاونت (ایم ایم ایف) کی منظوری دے دی ہے، اس سرمایہ کاری پروگرام کے تحت پاکستان میں علاقائی رابطوں کے فروغ اورسڑکوں و شاہراہوں پر آمدورفت کو بہتر اور موثر بنانے کے لیے اقدامات کیے جائیں گے، 2017 میں 18کروڑ ڈالر کی پہلی قسط سے سندھ، پنجاب اورخیبرپختونخوا میں سڑکوں اورشاہراہوں کی بحالی و بہتری کے لیے اقدامات کیے جائیں گے، دوسری اورتیسری قسط کی مالیت بالترتیب 26 کروڑ اور36 کروڑ ڈالر ہوگی اوراس کی منظوری 2019 اور2021 میں متوقع ہے۔

وسطی اورمغربی ایشیا کے لیے بینک کے ٹرانسپورٹ اورکمیونی کیشن ڈویژن کے ڈائریکٹرڈانگ سو یو نے بتایا کہ وسطی ایشیا، چین اورجنوبی ایشیا کے سنگم پر ہونے کی پاکستان کی منفرد علاقائی اورجغرافیائی اہمیت مسلمہ ہے اوریہ ملک علاقائی ٹرانسپورٹ اورعلاقائی تجارت کا مرکزبننے کی مکمل صلاحیتوں سے مالامال ہے، سرمایہ کاری پروگرام سے حکومت پاکستان کو تجارت اورعلاقائی رابطوں کی اہمیت اور استعداد کو سمجھنے، ان سے استفادہ کرنے اور پائیدارترقیاتی اہداف کو حاصل کرنے میں مدد ملے گی۔

بیان کے مطابق علاقے میں سمندری ٹریفک کے حوالے سے پاکستان کو مرکزی حیثیت حاصل ہے تاہم ملک میں سڑکوں اورشاہراہوں کی حالت زار اور ناقص ٹرانسپورٹ کی وجہ سے پاکستان ان ٹرانزٹ ٹریڈ سے مکمل طورپراستفادہ نہیں کر رہا ہے۔

بیان میں کہا گیا کہ ملک بھر میں 2 لاکھ 63 ہزار کلومیٹر طویل شاہراہوں کی بہتری اور ٹرانسپورٹ سیفٹی کویقینی بنانا پاکستان کیلیے تجارتی مسابقت اور پائیدار اقتصادی ترقی وفروغ کے حوالے سے اہمیت کا حامل ہے، وسط ایشیا علاقائی اقتصادی تعاون (کاریک) کاریڈور کے ضمن میں اس معاونت سے پاکستان میں 747کلومیٹر طویل شاہراہوں کی بحالی اوربہتری کو ممکن بنایا جائے گا، اس سرمایہ کاری پروگرام سے نیشنل ہائی ویز اتھارٹی کی استعداد کار میں بھی بہتری آئے گی۔