امام حسین رضی الله عنہ کا ذکر خیر اسلام کی حلاوت پا لینے کی دلیل ھے

71

تحریر: محمد سجاد رضوی (نوٹنگھم برطانیہ)۔

رات 9 بجے موٹروے پہ گاڑی 70 میل فی گھنٹہ کی رفتار سے بھاگی جارھی ہے۔ آٹھویں شب کا چاند’ ابھی نا مکمّل مگر خوب روشن’ میری گاڑی کی دائیں جانب ھم سفر ھے۔ بادل کی ایک ھلکی سی چادر اوڑھے’ چاند مغموم سا دکھائی دیا۔ یا صرف میرا احساس ھے کہ اتنے خوبصورت موسم میں بے سبب اداسی باطنی دنیا کو پژمردہ کررھی ھے۔ میں نے سوچا کہ ایسا کیوں ھے۔۔۔۔۔؟؟؟

خیال آیا کہ محرم الحرام کی انھی راتوں میں ایک حسین جوان اپنے خانوادہ اور چند ساتھیوں کے ھمراہ ، لوگوں کے خاص اصرار پہ اپنا وطن چھوڑ کر مسافر بنا تو اسی چاند نے اس کی زلفوں کے بوسے لئے اور کربلا کی زمین پہ اپنی روشنی بطور ھدیہ پیش کی۔

کربلا کے میدان میں خیمے لگائے یہ مجسمہ حسن و جمال کون ھے؟؟؟

میرے کانوں میں شیرینی گھلی اور احساس کی دنیا سے صدا آئی۔۔۔” یہ اس فاطمۃ الزاھرا کا بیٹا ہے جسے فاتح بدر و حنین نے اپنے وجود کا ٹکڑا قرار دیا۔۔۔ جس کا نکاح آسمان سے طے پایا۔۔۔ جس کی طہارت کی داستان قرآن سناتا ہے۔۔۔ جس کی عبادت کے چرچے قدسیوں کو رشک میں ڈالتے ہیں۔۔۔۔۔۔ جی ہاں۔۔۔ اس جوان کی والدہ سیدہ طیبہ طاہرہ حضرت فاطمۃ الزاھرا رضی الله عنھا ہیں ۔۔۔  اور اس کے والد۔۔۔۔؟؟

خیبر شکن، باب مدینۃ العلم ، مرجع اھل صفا۔۔۔۔ منبعِ جود و سخا۔۔۔۔ محب و محبوبِ خدا۔۔۔ “لا فتی الا علی لا سیف الا ذوالفقار ” کی کرامت سے مرصع۔۔۔ حضرت علی المرتضیٰ رضی الله عنہ ہیں۔۔۔۔

اور اس پیکر جمال کا سب سے بڑا تعارف یہ ھے کہ اس کے نانا وہ ہستی ہیں جو مقصودِ کائنات ہیں۔۔۔ امام الانبیاء و المرسلین ۔۔۔ رحمۃ للعالمین ۔۔۔ سرورِ سروراں۔۔۔ ھادی انس وجاں۔۔۔ محبوب رب دوجہاں ۔۔۔ مرکز و محورِ عرشیاں۔۔۔ راحت و تسکینِ عاشقاں ۔۔۔ حضرتِ محمد رسول الله ۔۔۔ صلی الله علیہ وآله واصحابہ وسلم۔۔۔۔ ہیں کہ جن کے وجود سے کل جہاں فیض پاتے ہیں۔۔۔۔

اس جوان کو حسین کہتے ہیں۔۔۔ وہ حسین۔۔۔ رضی الله تعالیٰ عنہ ۔۔۔۔ کہ خداداد جراءت وبہادری سے آراستہ ۔۔۔ حسن بے مثال سے پیراستہ ۔۔۔ شہادت جس پہ ناز کرے۔۔۔ وفا جس کے قصیدے پڑھے۔۔۔ صبر ‘ جس کا شعار ہے۔۔۔ عزم ‘ جس کا وقار ہے۔۔۔ چلے تو دشمن لرز اٹھے۔۔۔ ڈٹے تو رشکِ جبل بنے۔۔۔ نواسہ رسولﷺہے۔۔ جگر گوشۂ بتول ہے۔۔ چشم حیدر (رضی اللہ عنہ ) کا نور ہے۔۔۔ اور اہل ایماں کے دلوں کا سرور ہے۔۔۔۔ اس کا تعارف چاھیے تو “آیتِ تطہیر ” پڑھو۔۔۔۔ اس کو جاننا چاہو تو “حسین مجھ سے، میں حسین سے” فرمان رسول ﷺ پڑھو۔۔۔

امام الشھدا۔۔۔ امام حسین رضی الله عنہ ۔۔۔ کہ جن کی تربیت نبوی ماحول میں ہوئی۔۔۔ سرور عالم ﷺ نے کبھی اپنی چادرِ نور میں چھپایا اور کبھی کندھوں پہ اٹھایا ۔۔۔۔ “پتلی پتلی گل قدس کی پتیاں ” کے مصداق لبوں سے حسینؓ کے ہونٹوں کے بوسے لئے۔۔۔ اور فرمایا۔۔۔ “میرے یہ بیٹے (حسن اور حسین رضی الله عنھما ) جنتی جوانوں کے سردار ہیں” ۔۔۔۔ پھر گل قدس کی پتیوں میں حرکت ھوئی تو فرمایا۔۔۔” یہ میرے دونوں بیٹے (حسن و حسین رضی الله عنھما ) دنیا میں جنت کے پھول ہیں۔۔۔۔”  اور کریم آقاﷺ نے یہ بھی تو ارشاد فرمایا۔۔  “جس نے حسن و حسین (رضی الله عنھما) سے محبت کی، اس نے مجھ سے محبت کی۔۔ اور۔۔۔ جس نے ان دونوں سے دشمنی رکھی’ اس نے مجھ سے دشمنی کی۔۔”

شروع میں عرض کی تھی کہ چاند اداس اداس لگتا ھے۔۔۔ کیوں ۔۔۔۔ ؟؟؟

اس لئے کہ اس نے کربلا میں مصائب و آلام میں گھرے اس شہزادے کا سارا منظر دیکھ رکھا ہے۔۔۔ اس نے علی اکبر کی جوانی ‘ شہادت کا جام پیتے دیکھی ہے۔۔۔ اس نے علی اصغر کے مرمریں حلق میں پیوست تیر دیکھا ہے۔۔۔ اس نے زینبؓ کی دعائیں سنی ہیں۔۔۔۔ اس نے خانوادہ نبوت کے گلوں کے خشک ہونٹ دیکھے ہیں۔۔۔ اس نے صبر کے پہاڑ ملاحظہ کئیے ۔۔۔ اس نے عزم و ھمت کے کوہ گراں دیکھے۔۔۔ اس نے نور نور جبینوں والے وفا شعار دیکھے۔۔۔ اس حسن دیکھا ۔۔۔۔ جمال دیکھا۔۔۔ رفعتیں دیکھیں ۔۔۔ کمال دیکھا۔۔۔ اس نے کئی دنوں کا بھوکا پیاسا حسینؓ دیکھا۔۔۔ جو یزیدی قوت کے سامنے ڈٹا رہا۔۔۔ باطل کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر لڑا۔۔۔ جس کی ہیبت سے شمر کا لشکر تھرتھر کانپا۔۔۔۔۔ہاں ہاں۔۔۔ اس چاند نے آغوشِ نبوت میں کھیلنے والے حسینؓ کا سر نیزے پہ تلاوتِ قرآن کرتا دیکھا۔۔۔۔

آہ۔۔۔۔۔! بتاؤ۔۔۔ یہ چاند پھر اداس کیوں نہ ہو۔۔۔۔

کہ کلمہ پڑھنے والوں نے اسی کا شہزادہ شہید کردیا جس سے دین لیا تھا۔۔۔ جس نے امن کی ردائیں دیں۔۔۔ جس نے دشمنوں کو دعائیں دیں۔۔۔ جس نے کائنات کو عزت و وقار کی خلعتیں تقسیم فرمائیں ۔۔۔ جو تمام جہانوں کے لئے رحمت بن کر تشریف لائے۔۔۔۔ ظالمو !! آج اسی کے گلستان میں ڈاکہ ڈالا۔۔۔ اسی کے پھولوں کے سر کاٹے۔۔۔ اسی کی محبت سے بغض رکھا۔۔۔۔۔ تم میدان حشر۔۔۔۔ صاحبِ لواء الحمد کو کیا جواب دو گے۔۔۔۔ جب میرے حسینؓ اپنے نانا کے ہاتھ میں ہاتھ ڈالے ۔۔۔۔ بزم حشر کی۔زینت بنیں گے۔۔۔ ان کی والدہ کیلئے فرشتوں کی نظریں تک جھک جائیں گی کہ کوئی دیکھ نہ پائے۔۔۔ ان کے والد حوض کوثر کے جام تقسیم کررہے ہوں گے۔۔۔۔ اس وقت۔۔۔ ہاں ۔۔ محشر کے میدان میں اس وقت نبیوں اور رسولوں کے امام نے اگر پکارا کہ کہاں ہیں میرے حسینؓ کے قاتل۔۔۔۔۔؟؟ ۔۔۔ تو بتاؤ۔۔۔ کیا جواب دو گے۔۔۔ کیسے منہ دکھاو گے۔۔۔۔۔؟؟ میرا عشق کہتا ھے کہ تمھارا چہرہ ۔۔۔ سرورِ عالم ﷺ کونہیں دکھایا جائے گا۔۔۔ کیونکہ رب کی غیرت گوارا نہ کرے گی کہ “لعنتی چہرے” اس رخِ انور کے سامنے آئیں جس کے جمال کی قسمیں قرآن کھاتاہے۔۔۔ اور وہ چہرہ آسمان کی طرف اٹھ جائے تو رب قبلہ تبدیل فرما دیتا ہے۔۔۔۔۔۔۔

اے امام ذی وقار ۔۔۔! تیری عظمت۔۔۔ ہمت۔۔۔ سطوت۔۔۔ جراءت اور شھادت پہ کروڑوں سلام۔۔۔۔ آپ کے والدین۔۔۔ آپ کے کریم نانا اور سیدہ خدیجہؓ کے حضور۔۔۔ بے حد و بے حساب ۔۔۔ اس گنہ گار امتی کا سلام۔۔۔۔

و صلی الله تعالیٰ علیہ و علی آلہ و ازواجہ و اصحابہ و علی جمیع امتہ۔۔۔ وبارک و سلم۔۔۔۔