لاہور ہائی کورٹ نے سانحہ ماڈل ٹاؤن کی رپورٹ طلب کرلی

6

ہائی کورٹ نے پنجاب حکومت سے سانحہ ماڈل ٹاؤن کی جوڈیشل انکوائری رپورٹ طلب کرلی ہے۔

فلک نیوز کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں سانحہ ماڈل ٹاؤن کی جوڈیشل انکوائری رپورٹ پبلک کرنے کے فیصلے کے خلاف حکومتی درخواست پر سماعت ہوئی۔ جسٹس عابد عزیز شیخ کی سربراہی میں فل بینچ نے کیس کی سماعت کی۔ حکومت کے وکیل خواجہ حارث نے عدالت میں دلائل دیتے ہوئے کہا کہ انکوائری رپورٹ جوڈیشل ریکارڈ نہیں اور اسے شہادت کے لئے استعمال نہیں کیا جاسکتا۔

خواجہ حارث نے عدالت سے استدعا کی کہ سانحہ ماڈل ٹاؤن سے متعلق درخواستیں فل بینچ کے پاس زیرسماعت تھیں، اس لیے سنگل بینچ کو درخواستوں پر سماعت کا اختیار نہیں تھا لیکن سنگل بینچ نے حقائق کے برعکس سانحہ ماڈل ٹاؤن رپورٹ پبلک کرنے کا حکم دیا لہذا عدالت سنگل بینچ کے فیصلے کو کالعدم قرار دے۔

ہائی کورٹ نے پنجاب حکومت کو سانحہ ماڈل ٹاؤن کی رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے کیس کی سماعت ملتوی کردی۔ عدالت نے حکم دیا کہ پنجاب حکومت آئندہ سماعت پر انکوائری رپورٹ پیش کرے اور ہم رپورٹ کا رازداری سے (ان کیمرہ) معائنہ کریں گے۔

واضح رہے کہ 17 جون 2014ء کو پنجاب پولیس نے  لاہور کے علاقے ماڈل ٹاؤن میں تحریک منہاج القرآن کے دفتر کے باہر موجود رکاوٹیں ہٹانے کے لیے انسداد تجاوزات آپریشن کیا تو پولیس اور تحریک منہاج القرآن کے کارکنوں کے درمیان تصادم کے نتیجے میں  14 افراد جاں بحق اور 90 سے زائد زخمی ہوگئے تھے۔

وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے حکم پر واقعے کی تحقیقات کے لیے جسٹس باقر علی نجفی پر مشتمل ایک رکنی عدالتی کمیشن تشکیل دیا گیا جس نے اپنی رپورٹ مکمل کرکے جمع کرادی تاہم حکومت تاحال اس رپورٹ کو منظر عام پر لانے سے گریزاں ہے۔