قطری شہزادوں کوشکارکی اجازت دینے پرپنجاب حکومت سے جواب طلب

9

ہائی کورٹ نے قطری شہزادوں کو پرندوں کے شکارکی اجازت دینے کے خلاف دائر درخواست پر وفاق اور پنجاب حکومت سے جواب طلب کرلیا ہے۔

قطراورمتحدہ عرب امارات کے شہزادوں کو پرندوں کے شکار کی اجازت دینے کے خلاف درخواست کی سماعت اسلام آباد ہائی کورٹ میں ہوئی۔ درخواست میں وفاق، سیکرٹری خارجہ اوروزیراعلیٰ پنجاب کوفریق بنایا گیا ہے۔

درخواست گزارکا سماعت کے دوران موقف تھا کہ پنجاب حکومت نے قطراور یو اے ای کے شہزادوں کوپرندوں کے شکار کی اجازت دی، شکارکے لیے امیرقطر شیخ حماد کو ضلع بہاولنگرجب کہ شیخ حماد بن جاسم کوبھکر، جھنگ اورلیہ کا علاقہ الاٹ کیا گیا، یہ وہی شہزادے ہیں جن کا پاناما کیس میں مسلسل ذکر ہوا ہے لیکن وہ پیش نہیں ہوئے، محکمہ داخلہ پنجاب نے پرندوں اور جانوروں کی حفاظت ایکٹ 1912 کی خلاف ورزی کی۔

درخواست گزارکی جانب سے اپیل کی گئی کہ عدالت ان دو ملکوں سے ہونے والے معاہدوں کی تفصیلات اورشہزادوں کی سیکیورٹی کے لیے اخراجات کی تفصیل طلب کرے، اس کے علاوہ عدالت عالیہ محکمہ داخلہ پنجاب کی جانب سے جاری نوٹی فکیشن کو غیر آئینی قرار دے۔ عدالت عالیہ نے فریقین سے 10 روز میں جواب طلب کرلیا۔