سابق وزیراعظم بے نظیربھٹو کو فوت ہوئے 10سال بیت گئے

11

لاڑکانہ: (فلک نیوز) سابق وزیر اعظم پاکستان اور پیپلز پارٹی کی شہید چیئر پرسن محترمہ بینظیر بھٹو کی دسویں برسی آج گڑھی خدا بخش بھٹو میں منائی جا رہی ہے، جس کے لیے تمام تر انتظامات مکمل ہیں۔ برسی تقریبات میں شرکت کے لیے پی پی پی چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اور سابق صدر آصف علی زرداری سمیت پیپلز پارٹی کے دیگر مرکزی و صوبائی رہنما نوڈیرو ہاؤس پہنچ چکے ہیں۔ برسی کی تقریبات میں شرکت کیلئے ملک بھر سے جیالوں کی لاڑکانہ آمد کا سلسلہ جاری ہے۔

برسی کے موقع پر گڑھی خدا بخش میں پیپلز پارٹی کی جانب سے سیاسی قوت کا مظاہرہ کیا جائے گا، جس سے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری اور آصف علی زرداری سمیت دیگر رہنما خطاب کریں گے۔ بینظیر بھٹو شہید کی برسی پر سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔ اس موقع پر 7 ہزار سے زائد پولیس اہلکار ڈیوٹیاں سرانجام دیں گے۔ سندھ حکومت کی جانب سے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کی 10 ویں برسی پر عام تعطیل کا اعلان کیا گیا ہے۔ سندھ حکومت اور اس کے ذیلی ادارے آج بند رہیں گے۔

خیال رہے بے نظیر بھٹو 21 جون 1953 کو کراچی میں پیدا ہوئیں، بینظیر بھٹو نے ابتدائی تعلیم لیڈی جیننگز نرسری اسکول اور کونونٹ آف جیسز اینڈ میری کراچی میں حاصل کی۔ ملک سے مارشل لاء اٹھوائے جانے کے بعد جب اپریل 1986 میں بے نظیر وطن واپس لوٹیں تو لاہور ائیرپورٹ پر ان کا فقید المثال استقبال کیا گیا۔ بے نظیر بھٹو 1987 میں نواب شاہ کی اہم شخصیت حاکم علی زرداری کے بیٹے آصف علی زرداری سے روشتہ ازدواج میں منسلک ہو گئیں۔ لیکن اس کے ساتھ ساتھ اپنی سیاسی جدوجہد کا دامن نہیں چھوڑا۔17 اگست 1988 میں ضیاءالحق طیارے کے حادثے میں جاں بحق ہو گئے تو ملک کے اندر سیاسی تبدیلی کا دروازہ کھلا۔

سینٹ کے چئیرمین غلام اسحاق کو قائم مقام صدر بنا دیا گیا۔ جس نے نوے دن کے اندر انتخابات کروانے کا اعلان کیا۔ 16 نومبر 1988 میں ملک میں عام انتخابات ہوئے، جس میں قومی اسمبلی میں سب سے زیادہ نشستیں پیپلز پارٹی نے حاصل کیں۔ اور بے نظیر بھٹو نے 2 دسمبر 1988 میں 35 سال کی عمر میں ملک اور اسلامی دنیا کی پہلی خاتون وزیرِاعظم کے طور پر حلف اٹھایا۔ 27 دسمبر 2007 کو انہیں لیاقت باغ میں جلسے کے بعد نامعلوم افراد کی جانب سے فائرنگ کر کے شہید کر دیا گیا۔