نااہلی سے ملک میں انتشار پھیلا، بس نکالنا تھا نکال دیا، الزام کیا ہے؟ نواز شریف

12

چکوال: (فلک نیوز) نواز شریف نے لیگی رہنماء چودھری لیاقت مرحوم کی یاد میں منعقدہ تعزیتی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 7 سال ہمیں پاکستان نہیں آنے دیا گیا، یہ زخم میرے دل پر لگے ہیں جو بھولنے والے نہیں ہیں، عوام کی خاطر یہ زخم بھلانا چاہتا ہوں، لیکن بھولنے نہیں دیئے جاتے، مجھے زخم بھولنے دو! زخم پر زخم مت لگاؤ۔

نواز شریف کا کہنا تھا کہ فخر سے کہتا ہوں ہمیشہ خلوص نیت سے عوام کی خدمت کی، عوام کی خدمت میں کوئی ملاوٹ نہیں، عوام نے میری کارکردگی کو دیکھا ہے، 2013ء میں ملک اندھیروں میں ڈوبا ہوا تھا، آج ملک سے لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ ہو گیا ہے، ہم نے 4 سال میں لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ کیا، لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا تھا۔

سابق وزیر اعظم نے کہا کہ گزشتہ 4 برسوں میں کبھی خدمت کے جذبے میں کمی نہیں آئی جنہوں نے عوام کو اندھیروں میں دھکیلا آج وہ لوگ کہاں ہیں؟ عوام کو ان کی شکلیں یاد رکھنی چاہیں، ان میں ڈکٹیٹر بھی تھے اور سیاستدان بھی تھے۔

نواز شریف نے کہا کہ سڑکیں اور موٹر ویز بنانا میرا ویژن ہے، بجلی کے اتنے منصوبے لگائے کہ آج ہر گھر میں بجلی ہے، 2013ء میں ہر جگہ دہشت گردی ہو رہی تھی، ہم نے کراچی میں امن قائم کیا، ملک سے دہشتگردی ختم کی لیکن اس فیصلے کے بعد ملک میں دہشتگردی پھر سر اٹھا رہی ہے۔

سابق وزیر اعظم نے دعویٰ کیا کہ ان کو نااہل کرنے سے ملک میں انتشار پھیل گیا، بس نکالنا تھا نکال دیا، عوام جاننا چاہتے ہیں الزام کیا ہے، معاملہ پانامہ کا تھا اور اقامہ پر ان کو نااہل کر دیا گیا، کرپشن پر نااہل ہوتا تو کسی کو منہ دکھانے کے قابل نہ رہتا لیکن میرے خلاف ایک دھیلے کی بھی کرپشن ثابت نہیں ہوئی۔