سستی انشورنس

7

محمد فیصل نوید گلیانوی

دورحاضر میں جہاں انسان کو گوناگوں مصروفیات کا سامنا ہے وہی اسکو کئی مشکلات بھی درپیش ہیں ۔ آئے روز انسان کو مصائب و آلام کی طماطم خیز موجیں اس دنیا کے بہر بے قراں میں بھٹکائے ہوئے ہیں ۔
اگر دیکھا جائے تو ہمارے ذیادہ تر مسائل ہمارے خود کے پیدا کردہ ہیں ۔ انسان نے خود کو اس نہج پہ لا کے کھڑا کر دیا ہے کہ اسے سلجھاؤ کا راستہ بھی نظر نہیں آتا ۔ زندگی کی کشمکش اسے بعض اوقات ایسے موڑ پر لے آتی ہے کہ اس کو اپنی ذات کے پنجرے تک سے جان چھڑانے تک کے عمل سے گزرنا پڑ جاتا ہے ۔۔۔
ہماری اخلاقی اقدار اور حوصلہ بھی چائنہ کے اس سستے مال کی مثل ہو چکے ہیں جسکو دینے سے پہلے دکاندار کہتا ہے کہ بھائی ۔۔۔ اسکی کوئی گارنٹی نہیں ہے ۔۔۔ ہمارا ا لمیہ بھی کچھ ایسا ہی ہے ہم نے اپنی ذاتی اقدار کو اتنا گرا لیا ہے کہ ہمیں خود پر اعتماد تک نہیں رہا ۔ کچھ ایام سے کئی ایسے خبریں سننے کو ملیں کہ لوگوں نے اپنے ساتھ ساتھ اپنے خون کے رشتوں کو بھی خون میں نہلا کے رکھ دیا ۔ کئی والدین نے اپنے ہاتھوں اولاد کو موت کے گھاٹ اتار دیا ، ذرا سی رنجش کیا ہوئی موت کی ہولی ایسے کھیل دی جاتی ہے جیسے کوئی بچوں کا کھیل ہو ۔۔۔ کھیلا کودا اور بات ختم ۔۔۔۔ ہم میں برادشت کا رویہ بالکل ختم ہو چکا ہے ۔۔ کسی کی بات، ذات ، تنقید، اصلاح ، مشورے تک کو ہم انا کا مسئلہ بنا کر اسکی ذات کے خلاف ہو جاتے ہیں ۔ عدم برادشت میں ذیادہ حالات کا اثر ہوتا ہے ذہنی تناؤ کی وجہ سے برداشت کی صلاحیت ختم ہو جاتی ہے ۔ اور معاملات پیچیدہ سے پیچیدہ ہونا شروع ہو جاتے ہیں ۔
مگر میرے پاس ایک بہت آسان اور سستا طریقہ ہے جس سے آپ کی بہت ہی مشکلات آسان ہو سکتی ہیں ۔ ذہنی تناؤ سے لے کر تمام مشکلات کے حل تک کے لے یہ کام آپ کے لیے بہت مفید ہے ۔ ہم میں سے بہت سے لوگ اس کام سے واقف بھی ہیں مگر بے دھیانی میں یا کمزور ایمان کی وجہ سے ہم خود ہی اس سے فیض یاب نہیں ہو رہے ۔ آپ سوچ رہے ہوں گے کہ یہ کونسا کام ہے ؟ کس طرح آپ سارے مصائب و آلام سے چھٹکارا حاصل کر سکتے ہیں ؟میں آپکو بتاتاہوں وہ سادہ اور آسان طریقہ جس کے ذریعے آپ کی زندگی بھی خوشحال ہو گی اور آپ کی تمام مشکلات بھی حل ہوں گی اور انشاء اللہ آپکو دنیا و آخرت میں کامیابی بھی ملے گی ۔
وہ سادہ اور آسان طریقہ ہے صدقہ ۔۔۔ جی ہاں صدقہ ذیادہ نہیں صرف روزانہ کے دس روپے بس ۔ صبح سویرے اپنے جان ، مال ، اولاد ، اہل و عیال کا صدقہ فقط دس روپے ضرور دیں ۔ ذیادہ دینے کا اس لیے نہیں کہوں گا کیونکہ کام وہی اچھا جو مستقل اور دیر پا ہو ۔۔۔ اسلیے فقط دس روپے کسی مسجد کے غلہ میں ڈال دیجیے یا کسی مدرسہ کے ۔۔ بس ۔ ان دونوں جگہوں کے علاوہ باقی کہیں آپ دینا چاہیں تو وہ علیحدہ سے دیں مگر مساجد اور مدارس کے غلوں میں روزانہ اپنے نام کا صدقہ ضرور دیں ۔ یہ وہ خاموش انشورنس ہے جو کہ آپکی زندگی سے لے کر تمام مشکلات اور تمام معاملات میں آپکی مدد گار ثابت ہو گی ۔ آپ اپنی زندگی میں ایک تبدیلی دیکھیں گے ۔۔ اپنے قلوب و اذہان کو بالکل تروتازہ محسوس کریں گے ۔۔
خود سوچیں کہ اللہ رب العزت نے ہمیں کتنے دفعہ صدقہ کا حکم دیا؟ اور ساتھ یہ بھی بتا دیا کہ صدقہ تمھاری مصیبتوں اور بلاؤں کو ٹالتا ہے ۔۔ تو کیاوجہ ہے کہ ہم اس آفر سے محروم ہیں ۔ یقینا اسکے بڑی وجہ دین اسلام سے دوری ہے ۔ مگر جو ہو چکا سو ہو چکا آئیے آج سے کچھ نہ کچھ تبدیل کریں اپنی ذات میں ۔ اپنے اعمال میں ۔۔۔۔ آئیے آج سے روزانہ اپنا صدقہ دیں ثواب کی نیت سے اور اپنا سب کچھ اللہ رب العزت کے حوالے کرکے دیکھیں کتنا سکون اور کتنا اطمینان ملے گا آپکو۔ایک دفعہ اپنا سب کچھ اپنے خالق کے حوالے کرکے تو دیکھیں ۔۔ وہ جو ستر ماؤں سے ذیادہ پیار کرنے والا ہے ، وہ جو روز ہمارے برے اعمال دیکھ کر بھی ہمیں رزق اور سانسوں کی نعمت سے نواز رہا ہے ۔۔ ایک دفعہ اسکی بارگاہ میں جا کہ تو دیکھیں ۔۔۔ اسکی انشورنس پالیسی اپنا کر دیکھیں ۔۔آپ زندگی بدل جائے گی ۔
۔ یقین نہ آئے تو آزما کے دیکھ لیجیے ۔۔۔۔ اللہ رب العزت میرا اور آپکا حامی و ناصر ہو ۔ آمین