بیٹے کے علاج کیلئے آئی خاتون کے ساتھ ہسپتال عملے نے جنسی زیادتی کر ڈالی

222


لاہور(24نیوز) میو ہسپتال  میں بیٹے کے علاج کیلئے آئی خاتون کو ہسپتال کے سکیورٹی گارڈ اور وارڈ اٹینڈنٹ نے مبینہ زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا، پولیس نے دو ملزمان کو گرفتار کر لیا جبکہ ایک ملزم تاحال فرار ہے

پولیس کے مطابق 2 روز قبل آمنہ بی بی کی مدعیت میں گوالمنڈی پولیس سٹیشن میں  میو ہسپتال  کے تین ملازمین کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا، آمنہ بی بی کا کہنا تھا کہ بیٹے کی طبیعت خراب ہونے کے باعث اسے  میو ہسپتال  میں داخل کرایا تھا اور خود بھی ساتھ ہی موجود تھی. میوہسپتال کےوارڈ اٹینڈنٹ شاہد بٹ کی جانب سے اپنے کمرے میں بلایا گیا، جب وہاں پہنچی تو شاہد بٹ نے کمرے کا دروازہ بند کردیا اور مبینہ طور پر زیادتی کا نشانہ بنایا اور دھمکیا ں بھی دیں۔

پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ملزم شاہد بٹ اور  میو ہسپتال  سکیورٹی کے سپروائزر عاشق کو گرفتار کر لیا، پولیس کا کہنا تھا کہ ایک ملزم تاحال فرار ہے، اسے بھی جلد گرفتار کر لیا جائے گا جبکہ گرفتار ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کر کے تفتیش کی جارہی ہے

ہسپتالوں میں اس طرح کے واقعات کا ہونا افسوس ناک ہے۔ واضح رہے کہ کچھ دن پہلے گوجرانوالہ کے چلڈرن ہسپتال میں سکیورٹی گارڈ اور لڑکی ایک ساتھ بند کمر ے میں غیر اخلاقی حرکات کرتے ہوئے پکڑے گئے تھے۔